1 تبصرہ

سنگاپور حصہ ١

خاصا وقت گزر چکا ہے آج کل کرتے کرتے مگر نئی ملازمت کا کام ہے کہ اب تک سر اٹھانے کا موقع نہیں مل رہا۔ اصل میں یہ میری پہلے والی ہی کمپنی ہے جہاں تین سال بعد دوبارہ ملازمت شروع کی ہے۔
اسی سلسلے میں پچھلے تین ماہ میں دو چکر سنگاپور کے لگے ہیں اور سچ پوچھیں تو بڑا ہی غصہ آیا اپنی قسمت پر جو ہمیں سنگاپور لے آئی وہ بھی اس عمر میں جب لوگ عمرے کی بکنگ کرواتے دکھائی دیتے ہیں۔ یہ اور بات کہ بقول اپنے ملک صاحب کے “ اب آ جو گئے ہیں تو“ 
 اپنا ہاضمہ تو پہلے ہی کمزور تھا سنگا پور دیکھا تو بالکل ہی پتلے لگ گئے! رشک اور حسد کے مارے یہ سوچ سوچ کر کہ ہمارا کراچی جب عروس البلاد ( جانے دنیا کو اسکی خبر تھی بھی یا ہم نے آپو آپی ہی بنا ڈالا تھا) کہلاتا تھا تو سنگا پور مشرقِ بعید میں کہیں پوتڑوں میں لپٹا رہتا تھا آج کسی حسینہ طرحدار کو جب پاکستان کا بتائیں تو حدود واربعہ پوچھتیں ہیں۔

پوچھا تو ایر پورٹ پر اُس حسینہ نے اور بھی بہت کچھ تھا جو لکھنے کے قابل نہیں ہے بس آپ خود تصور کر لیجیے۔  
حالت پتلی اسوجہ سے بھی ہوگئی کہ باوجود تاکید کے عربوں کی ہوائی کمپنی نے کارندے جسکے دیسی تھے ہمارا سامان اسی جہاز پر نہیں بھجوایا جسمیں ہم خود پدھارے تھے۔ گم شدہ سامان والے شعبے میں ایک اور مہربان خاتون کو اپنی بپتا سنائی اور اس کی تسلی تشفی سے مطمئن ہوکر بھائی خورشید کی طرف چل دیے جو مجھ سے ہفتہ بھر پہلے سے سنگاپور میں براجمان تھےاور ہوٹل ٨١ میں انہوں نے ہماری بھی بکنگ کروادی تھی ہماری سے مراد میری اور برادرم ملک عباس کی ۔ ہوٹل ٨١ صاف ستھرا ہوٹل تھا اور ہمیں اس وجہ سے بھی پسند آیا کہ اور کہیں جگہ دستیاب بھی نہیں تھی۔ یہاں سے قریب ہی مسجد عبدالغفور کے سامنے ملباری کا ریسٹورینٹ بھی ہے جہاں کا حلال کھانا دو وقت کھانے کے بعد بندہ شہزادہ طلال کو اور دنیا کے یہودیوں کو دعائیں دیتا ہے کہ جنہوں نے میکڈونلڈ کی شاخیں دنیا جہاں میں کھولیں کم ازکم سنگاپور میں تو میکڈونلڈ ایک نعمتِ غیر مترقبہ سے کم نہیں کہ جہاں حلال اور ہائیجینک کھانا مل سکتا ہے(اپنے وطن میں میکڈونلڈ کو آگ لگانے والوں سے ایک سوال؛ سنگاپور، ہانگ کانگ، کوریا جیسے ملکوں میں جاکر کہاں کھاؤ گے؟؟؟؟؟)
اسی حرام حلال پر میرے ایک دوست یاسر صاحب فرمانے لگے کہ انگلینڈ میں ایک صاحب مے نوشی فرمارہے تھے تو ویٹرس اسنیکس بھی لے آئی صاحب نے استفہامی انداز میں پوچھا کیا یہ حلال ہے؟ ویٹرس نے کڑک کر جواب دیا کہ “ اس کے متعلق تو یقین نہیں ہے لیکن جو تم پی رہے ہو یہ یقیناً حرام ہے۔“
چھڈو جی آؤ ہوٹل ٨١ کی طرف پہلے ایک دو دن ہمیں کچھ زیادہ نہیں لیکن ہلکی پھلکی گڑ بڑ کا احساس ہواعباس نے بھی ذکر کیا کہ یار یہاں جوڑے کچھ زیادہ ہی نہیں آتے۔؟ ہاں یہ بات تو میں نے بھی نوٹ کی ہے۔ پھر پتا چلا صاحب یہ تو ہے ہی گھنٹے دو گھنٹے کی بکنگ کے لیے اب عباس اور میری نیندیں حرام
(نیندیں حرام ~~~~~~ وہ کس لیے آپ اندازہ لگائیے میں آتا ہوں ایک چھوٹے سے وقفے کے بعد)   

One comment on “سنگاپور حصہ ١

  1. جناب آپ کو اِس کھیل سے منسلک کیا گیا ہے ۔

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: