1 تبصرہ

بوٹسوانا کا مسافر

میں عمومًا آن لائن ہی چیک ان کرتا ہوں اور میری کوشش ہوتی ہے کہ کھڑکی کی طرف والی سیٹ لوں کہ ہمراہی کو نقل و حرکت کی اور مجھے آرام کی آزادی رہے لیکن اس دفعہ جانے کیوں میں نے اگلی جانب راہ داری کی نشست کو منتخب کیا۔ دوحہ کیونکہ قطر ایر ویز کا بیس اسٹیشن ہے اس لیے دنیا جہاں سے مسافروں کو پہلے یہاں لایا جاتا ہے پھر اگلی منزلوں کو اڑان بھری جاتی ہے اسی لیے قطر میں پاکستانی نسبتًا کم ہونے کے باوجود کراچی اسلام آباد آنے والی  کوئی بھی پرواز خالی نہیں ہوتی اور دور دراز والے لوگوں سے ہمسفری کا موقع ملتا ہے۔ میں ابھی نشست پر بیٹھا ہی تھا کہ چھوٹی چھوٹی داڑھی (پاکستانی مارکہ) والے ایک صاحب جنکی عمر 40 بیالیس کے لگ بھگ ہوگی تشریف لائے میری ساتھ والی نشست پر بیٹھنے کے لیے۔
 جب میں نے انہیں آگے بڑھنے کے لیے راستہ دینا چاہا تو انہوں نے پیشکش کی کہ اگر آپ کونے پر بیٹھنا چاھیں تو کوئی حرج نہیں۔ یہ عمران صاحب تھےجن سے تعارف کے بعد بات چیت شروع ہوئی تو پتہ چلا کہ جنوبی افریقہ کے پڑوسی ملک بوٹسووانا سے آرہے ہیں ان کا وہاں بیڈنگ (ٹیکسٹائل) کا کاروبار ہے چھ سال سے جنوبی افریقہ میں کوشش کی اور پھر اب دوسال سے کہیں جاکر بوٹسووانا میں سیٹ ہوئے ہیں اور خاندان بھی ہمراہ ہے۔ میرے کچھ ساتھی جنوبی افریقہ اور موزمبیق سے تعلق رکھتے ہیں ان کے حوالے سے مجھے کچھ تو معلومات تھیں لیکن ایک پاکستانی سے وہاں کے حالات جاننے کی بات ہی کچھ اور ہے اس لیے اب گفتگو شروع ہوئی تو اسلام آباد  لینڈنگ کے وقت ہی جاکر سلسلہ ختم ہوا۔ 
پہلی بات جو اُن سے پوچھی وہ جنوبی افریقہ کی یونیورسٹی کے حوالے سے تھی کہ میرے ایک دوست اپنی دو بیٹیوں کو وہاں تعلیم کی غرض سے بھجوانا چاہ رہے ہیں وہاں امن امان کی کیا صورتحال ہے آیا اکیلی بچیاں وہاں اپنی تعلیم جاری رکھ پائیں گی؟ پہلے تو انہوں نے چھوٹتے ساتھ ہی کہہ دیا کہ نا بھئی نا وہاں کلب ہیں کیسینو اور شراب خانے ہیں۔
 لیکن عمران صاحب یہ سب تو یوکے امریکہ میں بھی ہے آپ سلامتی کے حوالے سے بتائیں؟ 
پہلے حالات بہت خراب تھے اب بہت تبدیلی ہے جنسی ہراسمنٹ نہیں ہے ہاں لوٹ مار ضرور ہوتی ہے سگنل پر کھڑی گاڑی سے موبائل پرس وغیرہ چھین لے جاتے ہیں۔ پھر کہنے لگے کہ اگر سوشل نا ہوں تو کوئی خطرہ نہیں ہے اپنی اسلامی کمیونیٹی بہت مضبوط ہے۔
پہلے تو جنوبی افریقہ جانے کے لیے ویزہ بھی نہیں لینا ہوتا تھا ایرپورٹ پر آمد کے وقت ہی ویزہ لگا دیتے تھے لیکن پھر کراچی میں آپریشن ہوا اور اپنے بھائی لوگ بھی وہاں بھی پہنچ گئے۔
انہوں نے ایسا کیا کردیا( میں بھی بھولا بَن گیا)؟
ان میں سے جو پڑھے لکھے تھے انہوں نے تو جنوبی افریقہ کا پاسپورٹ پکڑا اور کینیڈا اور آسٹریلیا چلے گئے جو یہاں رہ گئے وہ لوٹ مار میں کالوں سے بھی آگے ہیں۔ خوجہ برادری (میمن) جنوبی افریقہ میں عشروں سے رہ رہے ہیں اور انکے کاروبار بھی جمے جمائے ہیں پاکستان اور انڈیا دونوں سے تجارتی روابط ہیں یوں کاروباری برادری میں نمایاں نظر آتے ہیں گو کہ سیاسی جھگڑوں سے دور رہتے ہیں لیکن کراچی سے روابط کی وجہ سے انہی لوگوں نے بھائیوں کی مدد بھی کی اور اب بھائی لوگوں کا تر نوالہ بھی بنے ہوئے ہیں۔
باقی اندرونِ ملک سے گجرات، پنڈی بھٹیاں سے  بھی تو لوگ آتے ہوں گے وہ ساؤتھ افریقہ میں کیا کرتے ہیں کیا وہ لوگ ان جرائم میں شامل ہوتے ہیں یا کوئی اور کام؟

انکے لیے یہ پڑاؤ ہے، ایجنٹ پیسے لیکر انہیں یہاں لاتے ہیں پھر کاغز وغیرہ بنوا کر یورپ بھجوادیتے ہیں یہاں کام ملنا تو مشکل نہیں ہے لیکن جو بندہ ولایت کے لیے گھر بار چھوڑ کر آتا ہے وہ بھلا یہاں کہاں رکے گا۔
کام کیسے ملتا ہے خود افریقی اتنے زیادہ ہیں؟
بھائی صاحب بوٹسوانا کی مثال دیتا ہوں کہ کالے کام کرتے نہیں لوگ انڈین کو ملازمت دینا پسند کرتے ہیں لیکن گورنمنٹ کی سختی ہے کہ مقامی افراد کو رکھنا ہی رکھنا ہے چاہے بٹھا کر کھلاؤ۔ پھر ایڈز بہت زیادہ ہے اس کی وجہ سے مردوں کی شرح اموات زیادہ ہے۔
 پھر ذراء جوش سے بولے بوٹسوانا میں آپ کو موٹر مکینک تک عورتیں ہی ملیں گی کہ تنہا مائیں ہیں اور بچے پال رہی ہیں۔          
   اچھا آپ یہاں قطر کی سنائیں آپ تو اسلامی ملک میں رہتے ہیں۔ یہاں کم از کم چوری چکاری کا تو آرام ہے پھر بچوں کی تعلیم کا مسئلہ ہے۔
عمران صاحب میں نے تو سنا ہے کہ کمیونیٹی کے اسلامی اسکول ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ ہاں جیسے نور اسکول سسٹم (نام کچھ ذہن سے محو ہوگیا ہے)جہاں باقی تمام بچے بھی پڑھتے ہیں لیکن دوپہر میں چھٹی ہونے کے بعد صرف مسلمان بچوں کو روک لیتے ہیں اور دو گھنٹہ
دینی تعلیمات دیتے ہیں ظہر کی نماز بھی وہیں ہوتی ہے تو بچوں کی عملی تربیت بھی ہوجاتی ہے ۔
آپ نے بتایا کہ انڈیا سے کافی لوگ ہیں وہاں ؟ بوٹسوانا نے انڈیا، پاکستان، سری لنکا وغیرہ سے انگلش سکھانے کے لیے ٹیچر مانگے تھے پاکستان سے تو کوئی نہیں پہنچا ہاں انڈیا نے پوری کھیپ بھجوادی اور آج اسکا پھل کھا رہے ہیں۔تجارت، دفاتر ٹرانسپورٹ ہر جگہ آپ کو انڈین ملے گا اور مصنوعات تو پھر ہوں گی ہی انڈیا کی۔
اچھا عمران صاحب پاکستانی تو پھر کافی کم ہوں گے تو میل جول اور تقریبات وغیرہ بھی نہیں ہوں گیں؟
بوٹسوانا میں پاکستانی کم ہیں ساؤتھ افریقہ میں کافی ہیں کچھ جان پہچان کے خاندان ہیں ان کے ساتھ مل بیٹھتے ہیں۔ بوٹسوانا میں انڈین کافی دوست ہیں ابھی بھی ہمارے پڑوس کی ہندو فیملی ہے انہوں نے باقیوں کے دیکھا دیکھی افطار پر مدعو کر لیا۔ اب ہماری یہ مشکل کہ کھانا کھانا اور بات ہے لیکن روزہ افطار کرنا عجب سا لگ رہا تھا گھر سے لیٹ نکلے اور راستے ہی میں کھجور سے روزہ افطار کر لیا۔ یوں تو کھانے کے معاملے میں بھی بہت صفائی پسند ہیں اور  کہیں ہمیں برا نا لگے اس لیے میری بیوی کو شروع شروع میں بھابھی اپنے ساتھ کچن میں رکھتی تھیں اور دونوں مل کر پکاتیں تھیں اب بھی تسلی دے رہے تھے کہ گھر اور بچوں کی طرف سے بے فکر رہیں پردیس میں ہم زبان مل جانا ہی بڑی نعمت ہوتا ہے۔
پردیس میں بچوں کو اکیلے چھوڑ کر آنا بھی کافی مشکل ہے اب بھی مجھے ایک تو کاروبار کے لیے اور دوسرا اپنی بچی کی تعلیم کے لیے آنا پڑ رہا ہے کہ میڈیکل کالج وغیرہ خود دیکھ آؤں۔
میرے استفسار پر کہ کوئی ڈائرکٹ فلائٹ بھی پاکستان آتی ہے ساؤتھ افریقہ سے تو کہنے لگے کہ پاکستانی ایر پورٹس پر اگر پتہ چل جائے کہ میں افریقہ سے آرہا ہوں تو محکمہ صحت والے بہت تنگ کرتے ہیں اسی لیے گھوم گھما کر ہی آنا بہتر ہے۔
عمران صاحب کو چاول ، تولیے، ٹی شرٹس اور ہوزری آئٹم درکار تھے لیکن بی کوالٹی تاکہ مقامی مارکیٹ کی قوت خرید میں ہوں جب کراچی میں اپنے بھائی اور کزن وغیرہ سے میں نے معلومات کیں تو پتہ چلا کہ جناب فیکٹریوں میں الو بول رہا ہے مال بن ہی نہیں رہا تو سپلائی کہاں سے ہو؟
(یہ تحریر 2009 رمضان کی ہے )

One comment on “بوٹسوانا کا مسافر

  1. یعنی پاک لوگ بوٹسوانا میں بھی رہتے ہیں۔
    بہت خوب🙂

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: